Blog

Pictorial Quran

رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:

لَوْ كَانَ لاِبْنِ آدَمَ وَادِيَانِ مِنْ مَالٍ لاَبْتَغَى ثَالِثًا، وَلاَ يَمْلأُ جَوْفَ ابْنِ آدَمَ إِلاَّ التُّرَابُ،

اگر ابنِ آدم کو دو وادیاں مال کی بھری ہوئی بھی مل جائیں پھر بھی چاہے گا کہ تیسری وادی مال کی بھری ہوئی اور ملے۔ اور ابنِ آدم کا پیٹ تو صرف قبر کی مٹی ہی بھرے گی ۔

صحیح بخاری، كتاب الرقاق
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:

” يَهْرَمُ ابْنُ آدَمَ وَيَشِبُّ مِنْهُ اثْنَانِ الْحِرْصُ عَلَى الْمَالِ وَالْحِرْصُ عَلَى الْعُمُرِ”

”آدمی بوڑھا ہوجاتا ہے مگر اس میں دو چیزیں جوان ہوجاتی ہیں، ایک زندگی کی حرص اور دوسری مال کی حرص۔”

صحیح مسلم : کتاب الزکوٰة
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:

‘يَقُولُ الْعَبْدُ مَالِي مَالِي إِنَّمَا لَهُ مِنْ مَالِهِ ثَلاَثٌ مَا أَكَلَ فَأَفْنَى أَوْ لَبِسَ فَأَبْلَى أَوْ أَعْطَى فَاقْتَنَى وَمَا سِوَى ذَلِكَ فَهُوَ ذَاهِبٌ وَتَارِكُهُ لِلنَّاسِ’

”بندہ یہ کہتا ہے کہ میرا مال، میرا مال، حالانکہ اس کے مال میں سے اس کی اپنی صرف تین چیزیں ہیں ایک وہ اُس نے کھا کر ختم کر دیا، دوسری وہ جسے اُس نے پہن کر بوسیدہ کر دیا، تیسری وہ جسے صدقہ کرکے اپنے لئے محفوظ کرلیا، اس کے سوا جو کچھ بھی بچ گیا وہ تو لوگوں کا مال ہے۔”

صحیح مسلم: کتاب الزہد والرقائق

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Check Also
Close
Back to top button